یونس خان کی آسٹریلیا کے خلاف مسلسل تیسری سنچری
پاکستانی بچہ کم عمر ترین مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ پروفیشنل بن گیا
پی آئی اے کے چار بوئنگ طیارے دو کروڑ روپے میں فروخت
نیلوفر کی شدت میں کمی ،طوفان کراچی سے 650 کلومیٹر دور
بلوچستان میں تخریب کاری کی بڑی سازش ناکام، اسلحہ وگولہ بارود برآمد
عمران خان اپنی اتحادی جماعت اسلامی پر بھی چڑھ دوڑے
پاکستان شاہ محمود کی درگاہ نہیں، اسپیکر وہ کریگا جو آئین میں ہوگا، پرویز رشید

 

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
  ادارتی صفحہ  
 
 
Triology of agony...کشور ناہید...لیاری کا حزنیہ
 
دمکتے مہر و وفا کے بادل
کفن کی دہلیز پہ اتر کے
جھلس گئے ہیں
وہ جو شادیاں تھی
سلگتے جسموں، ابلتے خوں ہیں
بدل گئی ہیں
وہ جو خواب رکھے نشیمنوں میں
انہیں جلایا ہے اور ضیافتِ شام کی گئی ہے
وہ جو صبح سورج سے جاگتی تھی
اسے بھی خود کش بموں کی مٹھی میں دے دیا ہے
وہ پھول جیسے حسیں بچے بھی
خوں کی بارش میں سو رہے ہیں
ہر ایک آنگن، ہر اک گلی میں
سروں پہ اوڑھے وہ بیوگی کی سفید چادر
صحن میں بیٹھی یہ پوچھتی ہے
مجھے دلاسہ دیا گیا ہے
کہ وہ تو جنت چلا گیا ہے
میں صبر کی عمر کیسے کاٹوں
میں اپنے بچوں کو مدرسے میں نہ جانے دونگی
مجھے تو ان کو
حسیں جواں ان کے باپ جیسا ہی
دیکھنا ہے
پہاڑ جیسی یہ عمر کاٹوں تو کیسے کاٹوں!
………………
ہزارہ بستی والوں کاحزنیہ
وقت کا دریا خون میں لپٹا
میرے شہر میں ٹھہرا ہے
سال کے ہر اک سانس میں خوں ہے
ہر دروازے، ہر چوکھٹ پہ خون کے دھبے
پوچھ رہے ہیں
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جس میں ہنستے پھول سے بچے تھے
مہندی رچائے سہاگنیں تھیں
اور کڑیل جواں ایسے تھے
ان کو دیکھ دعائیں
ہونٹوں پہ آجاتی تھیں
اب تو کفن کے بادلوں سے یہ شہر اٹا ہوا ہے
ہر گھر میں کھلنڈرا بچہ ڈرا ہوا ہے
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جہاں چراغ قبروں پہ نہیں
گھروں میں جلا کرتے تھے
جہاں اجلی عورتیں ہنستی تھیں
اور بوڑھے باپ کے کندھے بھی چوڑے تھے
آج سبھی دالانو میں سائے گھوم رہے ہیں
کوئی دلاسہ دینے والا حرف
کسی دامن میں نہیں ہے۔
……………
شامی نقل مکانیوں کا حزنیہ
ہمیں شہر بدر کرنے کو کہا تو کسی نے نہیں تھا
گولیوں کی بوچھاڑ میں جب اپنے
اتنی دور ہوئے کہ ہمیں لمبی لمبی قبریں بناکر
انہیں دفن کرنا پڑا
جب خوف کے مارے
ہماری چھاتیوں کا دودھ خشک ہوگیا
جب ہماری خیمہ بستیوں کو نذر آتش
کیا گیا
جب زمین کا کوئی کونہ ہمیں پناہ دینے سے
گریزاں تھا
اے ہماری وطن شام کی سرزمین
ہماری آبا، بی بی زینب کی سرزمین
ہمیں مجھے الوداع کہنا پڑا
یہ ہمارے قدموں نے مجھے الوداع کہا ہے
ہماری آنکھیں ابھی تک
تیری انگور کی بیلوں میں ٹھہری ہوئی ہیں
شفتالو کا ذائقہ ابھی تک ہماری زبان پر ہے
طرح طرح کے خوان آتے ہیں
لوگ چھپ کر اور ظاہر میں بھی
ہمارے لئے زیتون اور عرق لے کر آتے ہیں
مگر اے ہماری بستی، ہماری خیمہ بستی
ہمیں وہ پیاس یاد آتی ہے
اس زمین کی خوشبو یاد آتی ہے
جہاں ہم نے گھٹنیوں چلنا
سیکھا تھا اور ہم تیری مٹی سے کھیلتے تھے
ہماری مسکراہٹ اسی دن واپس آئے گی
جب ہمارے قدم
اے ہمارے وطن سرزمین شام، شہر دمشق
تو ہمارا استقبال دف بجا کر کر گیا
Print Version       Back  
نہ روٹی ہے نہ کپڑا ہے نہ گھر ہے
کرے اس حال میں خلقِ خدا کیا
حکومت کی نہیں یہ ذمہ داری
تو اس کی ذمہ داری ہے بھلا ...
 
 
 
لٹی ہوئی مسائل کا شکار ، میرٹ اور انصاف کی طلبگار آنکھوں میں انقلاب کے خواب سجائے معصوم قوم حیران پریشان بیٹھی ہے، جنہیں محرم سے پہلے ہی کربلا کے ظلم اور سختیاں سنا ...
 
 
 
SMS: #NAN (space) message & send to 8001
مسز اندراگاندھی نے طاقت کواپنے ہاتھ میں رکھنے کےلئے اوربرصغیر کی سیاست کے مدوجزر کوسمجھتے ہوئے اپنے والد جوکشمیر نژاد تھے ان ...
 
 
 
SMS: #KNA (space) message & send to 8001
khawaja.naveed.ahmed@janggroup.com.pk
جلدی میں منہ سے لفظ جمالو نکل گیا
کہنا یہ چاہتا تھا کہ تم مہ جمال ہو
اک بار ...
 
 
 
SMS: #SSC (space) message & send to 8001
sughra.sadaf@janggroup.com.pk
واقعۂ کربلا اورتصوف میںگہری مماثلت ہے۔ اپنی اثر انگیزی اوررجحان کے حوالے سے دونوں ...
 
 
 
SMS: #HAC (space) message & send to 8001
abidi@janggroup.com.pk
س:سر میں نے2011ء میں 71% نمبروں کے ساتھ اکنامکس میں ماسٹرز پنجاب یونیورسٹی لاہور سے کیا ہے لیکن ...
 
 
 
SMS: #BGC (space) message & send to 8001
bilal.ghauri@janggroup.com.pk
ایڈ ہوبن ہالینڈ کا 42سالہ کنوارہ شہری ہے جس کے 98ویں بچے نے چند روز قبل مغربی جرمنی میں جنم ...
 
 
 
SMS: #PIB (space) message & send to 8001
وزیر اطلاعات پرویز رشید نے کہا ہے:جمہوریت نے بڑا دھچکا برداشت کر لیا، غیر ملکی سرمایہ کاروں کا پاکستان پر اعتماد بڑھا، عوام ...