ورلڈ کپ:زمبابوے کیخلاف میچ میں یونس خان کو نہ کھلانے کا فیصلہ
ایم کیو ایم کا سینیٹ انتخابات کیلئے آئینی ترمیم کی حمایت کا فیصلہ
ایک شخص گائے کی دم پکڑ کر گھر میں داخل ہونا چاہ رہا ہے،فضل الرحمان
سابقہ شوہر کے قتل میں مدد سے انکار پر عبیرہ کو قتل کیا،طوبیٰ کا اقرار
بلوچستان کے مختلف حصوں میں بارش کا امکان
سرفراز کو زمبابوے کیخلاف پلیئنگ الیون سے پھر باہر رکھنے کا فیصلہ
ملک میں انقلابی تبدیلی ایم کیو ایم کے سائے تلے آئیگی:الطاف حسین

 

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
  ادارتی صفحہ  
 
 
Triology of agony...کشور ناہید...لیاری کا حزنیہ
 
دمکتے مہر و وفا کے بادل
کفن کی دہلیز پہ اتر کے
جھلس گئے ہیں
وہ جو شادیاں تھی
سلگتے جسموں، ابلتے خوں ہیں
بدل گئی ہیں
وہ جو خواب رکھے نشیمنوں میں
انہیں جلایا ہے اور ضیافتِ شام کی گئی ہے
وہ جو صبح سورج سے جاگتی تھی
اسے بھی خود کش بموں کی مٹھی میں دے دیا ہے
وہ پھول جیسے حسیں بچے بھی
خوں کی بارش میں سو رہے ہیں
ہر ایک آنگن، ہر اک گلی میں
سروں پہ اوڑھے وہ بیوگی کی سفید چادر
صحن میں بیٹھی یہ پوچھتی ہے
مجھے دلاسہ دیا گیا ہے
کہ وہ تو جنت چلا گیا ہے
میں صبر کی عمر کیسے کاٹوں
میں اپنے بچوں کو مدرسے میں نہ جانے دونگی
مجھے تو ان کو
حسیں جواں ان کے باپ جیسا ہی
دیکھنا ہے
پہاڑ جیسی یہ عمر کاٹوں تو کیسے کاٹوں!
………………
ہزارہ بستی والوں کاحزنیہ
وقت کا دریا خون میں لپٹا
میرے شہر میں ٹھہرا ہے
سال کے ہر اک سانس میں خوں ہے
ہر دروازے، ہر چوکھٹ پہ خون کے دھبے
پوچھ رہے ہیں
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جس میں ہنستے پھول سے بچے تھے
مہندی رچائے سہاگنیں تھیں
اور کڑیل جواں ایسے تھے
ان کو دیکھ دعائیں
ہونٹوں پہ آجاتی تھیں
اب تو کفن کے بادلوں سے یہ شہر اٹا ہوا ہے
ہر گھر میں کھلنڈرا بچہ ڈرا ہوا ہے
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جہاں چراغ قبروں پہ نہیں
گھروں میں جلا کرتے تھے
جہاں اجلی عورتیں ہنستی تھیں
اور بوڑھے باپ کے کندھے بھی چوڑے تھے
آج سبھی دالانو میں سائے گھوم رہے ہیں
کوئی دلاسہ دینے والا حرف
کسی دامن میں نہیں ہے۔
……………
شامی نقل مکانیوں کا حزنیہ
ہمیں شہر بدر کرنے کو کہا تو کسی نے نہیں تھا
گولیوں کی بوچھاڑ میں جب اپنے
اتنی دور ہوئے کہ ہمیں لمبی لمبی قبریں بناکر
انہیں دفن کرنا پڑا
جب خوف کے مارے
ہماری چھاتیوں کا دودھ خشک ہوگیا
جب ہماری خیمہ بستیوں کو نذر آتش
کیا گیا
جب زمین کا کوئی کونہ ہمیں پناہ دینے سے
گریزاں تھا
اے ہماری وطن شام کی سرزمین
ہماری آبا، بی بی زینب کی سرزمین
ہمیں مجھے الوداع کہنا پڑا
یہ ہمارے قدموں نے مجھے الوداع کہا ہے
ہماری آنکھیں ابھی تک
تیری انگور کی بیلوں میں ٹھہری ہوئی ہیں
شفتالو کا ذائقہ ابھی تک ہماری زبان پر ہے
طرح طرح کے خوان آتے ہیں
لوگ چھپ کر اور ظاہر میں بھی
ہمارے لئے زیتون اور عرق لے کر آتے ہیں
مگر اے ہماری بستی، ہماری خیمہ بستی
ہمیں وہ پیاس یاد آتی ہے
اس زمین کی خوشبو یاد آتی ہے
جہاں ہم نے گھٹنیوں چلنا
سیکھا تھا اور ہم تیری مٹی سے کھیلتے تھے
ہماری مسکراہٹ اسی دن واپس آئے گی
جب ہمارے قدم
اے ہمارے وطن سرزمین شام، شہر دمشق
تو ہمارا استقبال دف بجا کر کر گیا
Print Version       Back  
آئیں بازارِ سیاست میں اگر
ہار جائیں قائد و اقبالؔ بھی
اہلیت سے رکنیت ملتی نہیں
چاہئے اس کے لئے کچھ مال ...
 
 
 
[email protected]
وہ کسی گہری سوچ میں تھا جب میں اسلام آباد کے ایک ہسپتال کے کمرے میں داخل ہوا، چھت کو گھورتے ہوئے جب اس کا دھیان میری جانب ہوا تو اس کی ...
 
 
 
SMS: #NRC (space) message & send to 8001
اگلے روز ایک دوست بہت پریشان تھا۔پوچھا کیا بجلی کا بل زیادہ آگیا ہے ؟ بولا نہیں، یہ بات نہیںہے ۔ہم نے کہا تو پھر کیا ملازمت ...
 
 
 
SMS: #NRC (space) message & send to 8001
ہم جن چند میدانوں سے کرکٹ کو باہر سمجھتے تھے ان میں عشق کا میدان بھی شامل تھا، لیکن احمد شہزاد نے ہماری یہ غلط فہمی بھی دور ...
 
 
 
SMS: #LZC (space) message & send to 8001
کرکٹ کا بخار زوروں پر ہے اور میڈیا سمیت پوری قوم کی سانسیں اس بخار کی وجہ سے پھولی ہوئی ہیں۔کبھی ہمارے بڑے بوڑھے کہا کرتے ...
 
 
 
SMS: #RSC (space) message & send to 8001
مہاتما گاندھی بھارت کے بابائے قوم ہیں۔ ملک بھر کے سرکاری اداروں اور بیرون ملک سفارت خانوں میں ہر جگہ ان کی تصویر آویزاں ملے ...
 
 
 
SMS: #KNA (space) message & send to 8001
[email protected]
پایا نہ دل، بہایا ہوا سیل اشک کا
میں پنجہ مژہ سے سمندر ہو چکا
ہر صبح حادثے سے ...
 
 
 
SMS: #PIB (space) message & send to 8001
وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے:کراچی آپریشن منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا، ریاست کے سوا کسی کے پاس بندوق برداشت نہیں کریں ...