معروف قانون دان عبدالحفیظ پیرزادہ لندن میں انتقال کرگئے
کراچی: نارتھ ناظم آباد میں ضیاء الدین اسپتال میں رینجرز کا پھر چھاپہ
عمران خان کی چیف الیکشن کمشنر سردار رضا سے ملاقات آج ہوگی
پشاور میں فائرنگ سے 3پولیس اہلکار شہید،6 زخمی
لاہور:پنجاب فوڈ اتھارٹی نے حرام جانور کا کئی من گوشت پکڑلیا
گورنر سندھ نجی دورے پر دبئی روانہ ہوگئے
فوج اور عوام نے دہشتگردی کے خاتمے کا تہیہ کرلیا،وزیر اعظم

 

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
  ادارتی صفحہ  
 
 
Triology of agony...کشور ناہید...لیاری کا حزنیہ
 
دمکتے مہر و وفا کے بادل
کفن کی دہلیز پہ اتر کے
جھلس گئے ہیں
وہ جو شادیاں تھی
سلگتے جسموں، ابلتے خوں ہیں
بدل گئی ہیں
وہ جو خواب رکھے نشیمنوں میں
انہیں جلایا ہے اور ضیافتِ شام کی گئی ہے
وہ جو صبح سورج سے جاگتی تھی
اسے بھی خود کش بموں کی مٹھی میں دے دیا ہے
وہ پھول جیسے حسیں بچے بھی
خوں کی بارش میں سو رہے ہیں
ہر ایک آنگن، ہر اک گلی میں
سروں پہ اوڑھے وہ بیوگی کی سفید چادر
صحن میں بیٹھی یہ پوچھتی ہے
مجھے دلاسہ دیا گیا ہے
کہ وہ تو جنت چلا گیا ہے
میں صبر کی عمر کیسے کاٹوں
میں اپنے بچوں کو مدرسے میں نہ جانے دونگی
مجھے تو ان کو
حسیں جواں ان کے باپ جیسا ہی
دیکھنا ہے
پہاڑ جیسی یہ عمر کاٹوں تو کیسے کاٹوں!
………………
ہزارہ بستی والوں کاحزنیہ
وقت کا دریا خون میں لپٹا
میرے شہر میں ٹھہرا ہے
سال کے ہر اک سانس میں خوں ہے
ہر دروازے، ہر چوکھٹ پہ خون کے دھبے
پوچھ رہے ہیں
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جس میں ہنستے پھول سے بچے تھے
مہندی رچائے سہاگنیں تھیں
اور کڑیل جواں ایسے تھے
ان کو دیکھ دعائیں
ہونٹوں پہ آجاتی تھیں
اب تو کفن کے بادلوں سے یہ شہر اٹا ہوا ہے
ہر گھر میں کھلنڈرا بچہ ڈرا ہوا ہے
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جہاں چراغ قبروں پہ نہیں
گھروں میں جلا کرتے تھے
جہاں اجلی عورتیں ہنستی تھیں
اور بوڑھے باپ کے کندھے بھی چوڑے تھے
آج سبھی دالانو میں سائے گھوم رہے ہیں
کوئی دلاسہ دینے والا حرف
کسی دامن میں نہیں ہے۔
……………
شامی نقل مکانیوں کا حزنیہ
ہمیں شہر بدر کرنے کو کہا تو کسی نے نہیں تھا
گولیوں کی بوچھاڑ میں جب اپنے
اتنی دور ہوئے کہ ہمیں لمبی لمبی قبریں بناکر
انہیں دفن کرنا پڑا
جب خوف کے مارے
ہماری چھاتیوں کا دودھ خشک ہوگیا
جب ہماری خیمہ بستیوں کو نذر آتش
کیا گیا
جب زمین کا کوئی کونہ ہمیں پناہ دینے سے
گریزاں تھا
اے ہماری وطن شام کی سرزمین
ہماری آبا، بی بی زینب کی سرزمین
ہمیں مجھے الوداع کہنا پڑا
یہ ہمارے قدموں نے مجھے الوداع کہا ہے
ہماری آنکھیں ابھی تک
تیری انگور کی بیلوں میں ٹھہری ہوئی ہیں
شفتالو کا ذائقہ ابھی تک ہماری زبان پر ہے
طرح طرح کے خوان آتے ہیں
لوگ چھپ کر اور ظاہر میں بھی
ہمارے لئے زیتون اور عرق لے کر آتے ہیں
مگر اے ہماری بستی، ہماری خیمہ بستی
ہمیں وہ پیاس یاد آتی ہے
اس زمین کی خوشبو یاد آتی ہے
جہاں ہم نے گھٹنیوں چلنا
سیکھا تھا اور ہم تیری مٹی سے کھیلتے تھے
ہماری مسکراہٹ اسی دن واپس آئے گی
جب ہمارے قدم
اے ہمارے وطن سرزمین شام، شہر دمشق
تو ہمارا استقبال دف بجا کر کر گیا
Print Version       Back  
بے امانی دفع کرکے امن کا
فیض خاص و عام تک پہنچائیں گے
جنگ ہم تخریب کاری کے خلاف
منطقی انجام تک پہنچائیں گے
SMS: #ANC (space) message & send to ...
 
 
 
am.nawazish@janggroup.com.pk
میں بلندی پر تھا اور میرے دائیں بائیں زندگی اپنی اپنی ڈگرپر اپنےاپنے کام کاج میں مصروف تھی ۔بڑے بڑے پلازے مجھے قدموں کے نیچے محسوس ہو ...
 
 
 
ہندوستانی حکمرانوں کے ردعمل اور خاص طور پر بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے ’’اظہار تکلیف‘‘ سے ثابت ہوتا ہے پاکستان چین اقتصادی راہداری منصوبہ بن جائے گا اور کامیاب ہوگا۔ ...
 
 
 
SMS: #NRC (space) message & send to 8001
فکر انگیزی ، جدت طرازی اور ندرت فکر و نظر کسی بھی قوم کی حیات اجتماعی کے تسلسل اور ارتقاء کیلئے ناگزیر ہیں۔ یہ کسی بھی قوم ...
 
 
 
SMS: #SSC (space) message & send to 8001
sughra.sadaf@janggroup.com.pk
حکومت سے لاکھ اختلافات رکھنے والے بھی اس بات سے متفق ہیں کہ وزیر اعظم ملک کی گرتی معیشت کو ...
 
 
 
SMS: #HRC (space) message & send to 8001
huzaifa.rehman@janggroup.com.pk
پاکستان کو قائم ہوئے 68سال ہوچکے ہیں۔اس طویل عرصے میں جہاں دیگر ادارے ٹوٹ پھوٹ کا شکار ...
 
 
 
abidi@janggroup.com.pk
SMS: #HAC (space) message & send to 8001
س۔ سر میرا بیٹا پاکستا ن نیوی انجینئرنگ کالج کراچی، انڈسٹریل اینڈ مینوفیکچرنگ ڈیپارٹمنٹ میں تعلیم ...
 
 
 
SMS: #MAS (space) message & send to 8001
ma.sabzwari@janggroup.com.pk
نظام تعلیم، معیار تعلیم، نصاب تعلیم ایسے موضوعات ہیں جن پر ہر حکومت نے زور دیا ہے۔ پاکستان ...