ڈاکٹر طاہر القادری کا دھرنا ختم کرنے کا اعلان
میں کہیں نہیں جانے والا، یہیں بیٹھا رہوں گا، عمران خان
نوبل انعام یافتہ ملالہ کےلیےایک اوراعزاز ،لبرٹی میڈل جیت لیا
عامرڈوگر جاویدہاشمی سےملاقات کیلئے ان کی رہائشگاہ پر پہنچ گئے
کنٹرول لائن پر فائرنگ کی تکلیف پاکستان خود اٹھائے گا،ارون جیٹلی
ایم کیو ایم آزاد کشمیر حکومت سے بھی الگ ہوگئی
اربوں روپے کا سونا غیرقانونی طور پر بیرون ملک منتقل کرنیکا انکشاف

 

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
  ادارتی صفحہ  
 
 
Triology of agony...کشور ناہید...لیاری کا حزنیہ
 
دمکتے مہر و وفا کے بادل
کفن کی دہلیز پہ اتر کے
جھلس گئے ہیں
وہ جو شادیاں تھی
سلگتے جسموں، ابلتے خوں ہیں
بدل گئی ہیں
وہ جو خواب رکھے نشیمنوں میں
انہیں جلایا ہے اور ضیافتِ شام کی گئی ہے
وہ جو صبح سورج سے جاگتی تھی
اسے بھی خود کش بموں کی مٹھی میں دے دیا ہے
وہ پھول جیسے حسیں بچے بھی
خوں کی بارش میں سو رہے ہیں
ہر ایک آنگن، ہر اک گلی میں
سروں پہ اوڑھے وہ بیوگی کی سفید چادر
صحن میں بیٹھی یہ پوچھتی ہے
مجھے دلاسہ دیا گیا ہے
کہ وہ تو جنت چلا گیا ہے
میں صبر کی عمر کیسے کاٹوں
میں اپنے بچوں کو مدرسے میں نہ جانے دونگی
مجھے تو ان کو
حسیں جواں ان کے باپ جیسا ہی
دیکھنا ہے
پہاڑ جیسی یہ عمر کاٹوں تو کیسے کاٹوں!
………………
ہزارہ بستی والوں کاحزنیہ
وقت کا دریا خون میں لپٹا
میرے شہر میں ٹھہرا ہے
سال کے ہر اک سانس میں خوں ہے
ہر دروازے، ہر چوکھٹ پہ خون کے دھبے
پوچھ رہے ہیں
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جس میں ہنستے پھول سے بچے تھے
مہندی رچائے سہاگنیں تھیں
اور کڑیل جواں ایسے تھے
ان کو دیکھ دعائیں
ہونٹوں پہ آجاتی تھیں
اب تو کفن کے بادلوں سے یہ شہر اٹا ہوا ہے
ہر گھر میں کھلنڈرا بچہ ڈرا ہوا ہے
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جہاں چراغ قبروں پہ نہیں
گھروں میں جلا کرتے تھے
جہاں اجلی عورتیں ہنستی تھیں
اور بوڑھے باپ کے کندھے بھی چوڑے تھے
آج سبھی دالانو میں سائے گھوم رہے ہیں
کوئی دلاسہ دینے والا حرف
کسی دامن میں نہیں ہے۔
……………
شامی نقل مکانیوں کا حزنیہ
ہمیں شہر بدر کرنے کو کہا تو کسی نے نہیں تھا
گولیوں کی بوچھاڑ میں جب اپنے
اتنی دور ہوئے کہ ہمیں لمبی لمبی قبریں بناکر
انہیں دفن کرنا پڑا
جب خوف کے مارے
ہماری چھاتیوں کا دودھ خشک ہوگیا
جب ہماری خیمہ بستیوں کو نذر آتش
کیا گیا
جب زمین کا کوئی کونہ ہمیں پناہ دینے سے
گریزاں تھا
اے ہماری وطن شام کی سرزمین
ہماری آبا، بی بی زینب کی سرزمین
ہمیں مجھے الوداع کہنا پڑا
یہ ہمارے قدموں نے مجھے الوداع کہا ہے
ہماری آنکھیں ابھی تک
تیری انگور کی بیلوں میں ٹھہری ہوئی ہیں
شفتالو کا ذائقہ ابھی تک ہماری زبان پر ہے
طرح طرح کے خوان آتے ہیں
لوگ چھپ کر اور ظاہر میں بھی
ہمارے لئے زیتون اور عرق لے کر آتے ہیں
مگر اے ہماری بستی، ہماری خیمہ بستی
ہمیں وہ پیاس یاد آتی ہے
اس زمین کی خوشبو یاد آتی ہے
جہاں ہم نے گھٹنیوں چلنا
سیکھا تھا اور ہم تیری مٹی سے کھیلتے تھے
ہماری مسکراہٹ اسی دن واپس آئے گی
جب ہمارے قدم
اے ہمارے وطن سرزمین شام، شہر دمشق
تو ہمارا استقبال دف بجا کر کر گیا
Print Version       Back  
ہماری تمہاری حفاظت سے بڑھ کر
کرے کیوں نہ اپنی حفاظت حکومت
نہیں شہریوں کو حکومت پہ ترجیح
کہ شہری ہیں شہری، حکومت ...
 
 
 
نوجوان نسل جسے پیارسے نئی پودبھی کہا جاتا ہے کہنے کو تو کسی بھی ملک کا حقیقی سرمایہ ہوا کرتی ہے مگر بد قسمتی سے ہمارے ملک میں یہ سرمایہ منجمد ہی رہا۔ آج کل نوجوانوںکی ...
 
 
 
SMS: #AMC (space) message & send to 8001
یہ بات تو یقیناً آپ جانتے ہونگے کہ امریکہ دنیا میں ترقی پذیر ممالک کواسلحہ کی فروخت میں سب سے آگے ہے، شاید یہ بات آپ کے ...
 
 
 
SMS: #MIT (space) message & send to 8001
siddiqui.irfan@janggroup.com.pk
جاپان کے پاکستان کے ساتھ حکومتی سطح پر اور عوامی سطح پر تعلقات ہمیشہ ہی مثالی رہے ہیں اسی ...
 
 
 
SMS:#FHC (space) message & send to 8001
furqan.hameed@janggroup.com.pk
انقرہ میں 14 اکتوبر بروز منگل یومِ دفاع پاکستان کی تقریب منعقد ہوئی۔ پاکستان میں تو ہر سال ...
 
 
 
SMS: #MAC (space) message & send to 8001
masood.ashar@janggroup.com.pk
سیاست کرنے والے دھرنے دیتے رہیںاور جلسے جلوس میںہزاروں بلکہ ان کے اپنے دعوے کے مطابق لاکھوں ...
 
 
 
SMS: #AMM (space) message & send to 8001
ہمارے عبدالستار ایدھی عمر اور علالت کے اس مرحلے پر انتہائی افسردہ ہیں کہ ڈاکوئوں نے انہیں گن پوائنٹ پر ڈکیتی کر کے کئی کروڑ ...
 
 
 
SMS: #MIB (space) message & send to 8001
Ishtiaq .baig@janggroup.com.pk
میں گزشتہ کئی سالوں سے پاکستان کے سب سے بڑے اخبار ’’جنگ‘‘ کے لئے کالم تحریر کررہا ہوں، اس ...